بڑے کان اور چھوٹی دُم

بڑے کان اور چھوٹی دُم

کیا آپ کو معلوم ہے کہ کسی زمانے میں خرگوش کے کان دوسرے جانوروں کی طرح چھوٹے ہوتے تھے اور اس کی دُم بھی کافی بڑی اور لمبی تھی۔


مگر بعد میں حالات کچھ ایسے ہوئے کہ خرگوش کی دم چھوٹی اور اس کے دونوں کان بڑے بڑے ہوگئے۔ اس کے پیچھے کیا کہانی ہے، وہ ہم آپ کو سناتے ہیں۔


اس زمانے میں خرگوش اور لومڑی میں بڑی گہری دوستی تھی۔ دونوں ایک دوسرے کے بغیر نہیں رہتے تھے۔ ہر وقت اور ہر کام میں ساتھ ساتھ رہتے تھے۔ وہ سردیوں کے دن تھے کہ ایک روز لومڑی نے خرگوش سے کہا:’’میرا مچھلی کھانے کو بہت دل چاہ رہا ہے۔ کچھ کرو تاکہ میری یہ خواہش پوری ہوسکے۔‘‘


لومڑی کی بات سن کر خرگوش کے منہ میں بھی پانی بھر آیا اور پھر دونوں نے مچھلی کے شکار کا پروگرام بنالیا۔ ان کے پاس مچھلی پکڑنے والا جال تو تھا نہیں، اس لیے سوچنے لگے کہ کیا کریں۔ 


کچھ دیر سوچنے کے بعد لومڑی نے خرگوش سے کہا:’’تمہاری یہ لمبی دُم کس دن کام آئے گی؟ چلو اس سے مچھلیاں پکڑتے ہیں۔‘‘ چناں چہ دونوں دریا پر پہنچ گئے۔ خرگوش دریا کے کنارے جاکر اس طرح بیٹھا تھا کہ اس نے اپنی دُم دریا کے پانی میں ڈال دی اور ا نتظار کرنے لگا کہ جوں ہی مچھلی میری دُم پکڑے تو میں اسے باہر گھسیٹ لوں۔

لومڑی بھی آرام سے بیٹھ کر انتظار کرنے لگی۔ تھوڑی دیر بعد خرگوش کو ایک جھٹکا لگا تو وہ سمجھ گیا کہ اس کی دم کسی نے پکڑلی ہے۔ چناں چہ اس نے لومڑی سے کہا:’’مجھے لگتا ہے کہ کوئی بڑی مچھلی میری دم سے لپٹ گئی ہے۔‘‘


لومڑی دوڑی دوڑی آئی اور دریا میں جھانک کر بولی:’’یہ تو بہت بڑا کچھوا ہے۔ مجھے تو اس بات کا ڈر ہے کہ کہیں یہ تمہیں دریا میں نہ گھسیٹ لے۔‘‘

یہ سنتے ہی خرگوش نے چیخنا اور چلانا شروع کردیا:’’ہائے ہائے مجھے پکڑو۔ اگر میں دریا میں گرگیا تو زندہ نہیں بچوں گا اور مرجاؤں گا۔‘‘

خرگوش کی چیخ و پکار نے لومڑی کو پریشان کردیا۔ اس کی سمجھ میں نہیں آرہا تھا کہ کیا کیا جائے۔ پریشانی کے عالم میں اس نے خرگوش کے دونوں کان پکڑلیے اور اپنی طرف کھینچنے لگی۔ ادھر کچھوا بھی اپنی پوری قوت سے خرگوش کی دُم کو پانی کے اندر کھینچ رہا تھا اور دوسری طرف لومڑی خرگوش کے دونوں کان پکڑے اسے پانی سے باہر نکالنے کے لیے پورا زور لگارہی تھی۔ آخر کار لومڑی نے خرگوش کو دریا سے باہر نکال ہی لیا، مگر یہ کیا ہوا؟ خرگوش کے دونوں کان بہت زیادہ کھینچنے کی وجہ سے بہت لمبے ہوگئے اور کچھوا بھی اس کی آدھی دم کاٹ کر لے گیا۔

بس اس دن سے خرگوش کے کان لمبے اور دم چھوٹی ہوگئی، لیکن اس سے خرگوش کو ایک فائدہ ہوا کہ وہ اپنے لمبے لمبے کانوں سے ہلکی سے ہلکی آہٹ سن لیتا ہے اور چھوٹی دم کی وجہ سے لومڑی سے بھی زیادہ تیز دوڑ سکتا ہے