Zakat scam in sindh

پیپلز پارٹی والوں نے زکوۃ بھی نا چھوڑی

سندھ ہائی کورٹ نے کہا ہے کہ شہری بھروسہ کرکے زکوۃ دیتے ہیں اور حکومت من پسند افراد کو دے دیتی ہے۔



سندھ ہائی کورٹ میں زکوۃ فنڈز میں کرپشن اور گھپلوں کے معاملے سے متعلق درخواست کی سماعت ہوئی۔


سماعت کے دوران سیکریٹری زکوۃ و عشر سندھ نے کہا کہ 16-2015 میں وفاق سے زکوۃ کی مد میں ایک ارب 19کروڑ روپے وصول ہوئے۔ یہ رقم تمام اضلاع کو آبادی کے لحاظ سے رقوم منتقل کی گئی۔ انہوں نے بتایا کہ زکوۃ کی رقم مختلف کیٹیگیریز میں تقسیم کی جاتی ہے جن میں معاونت کار اسکیم، صحت، قدرتی آفات کے متاثرین کیلئے بحالی فنڈزشامل ہے۔ اس کے علاوہ بچیوں کی شادی، تعلیم فنڈز، دینی مدارس کو بھی رقم تقسیم کی جاتی ہے۔


رپورٹ دیکھ کر فاضل جج نے کہا کہ شہری بھروسہ کرکے زکوۃ دیتے ہیں اور حکومت من پسند افراد کو دے دیتی ہے، زکوۃ کی رقم میں اتنی بے قاعدگیاں اور گھپلے، کچھ تو خیال کریں۔ عدالت نے زکوۃ فنڈز کے آڈٹ کیلئے سرکاری وکیل سے مستند فرمز کے نام مانگ لئے، فنڈز کی تحقیقات کیلئے ایڈیشنل اٹارنی جنرل کی جے آئی ٹی بنانے کی تجویز پر بھی غور کیا جائے گا۔

تبصرے

  • اس پوسٹ پر تبصرے نہیں ہیں!