پاکستان کرکٹ اور اگر مگر

اگر مگر اور پاکستان کرکٹ تیم کے درمیان تعلق بہت گہرا ہے


جب عرش والے کی مدد آتی ہے تو فرش والے کچھ بھی نہیں بگاڑ سکتے۔۔ اس کا تجربہ پاکستان اور ساﺅتھ افریقہ کا میچ دیکھنے کے بعد ہوا اور اس بات پر دل سے یقین آگیا کہ جب اللہ مدد کرنے پر آئے تو غیب سے راستے بناتا ہے۔۔

 ہماری ٹیم کی بھارت کے ہاتھوں دھواں دار شکست کے بعد ساﺅتھ افریقہ جیسی عالمی نمبر1ٹیم سے جیت جانا کسی معجزے سے کم نہیں تھا۔ کچھ تو باﺅلرزنے اپنی محنت سے ساﺅتھ افریقی ٹیم کو رنز بنانے سے باز رکھا اور باقی کی مدداللہ نے ابرِ رحمت برسا کر کردی۔۔ اورکھلاڑی باقی کامیچ بناکھیلے اور محنت کئے ہی جیت کر پوائنٹ ٹیبل پر2پوائنٹ حاصل کرنے میں کامیاب ہو گئے۔

پہلے میچ میں وہاب ریاض کی انتہائی بری باﺅلنگ پرفارمنس کے بعد انھیں ٹیم کا حصہ ہونے کا شرف حاصل نہ رہا جسکے باعث ساﺅتھ افریقہ کی ٹیم بھارت کی طرح چوکے چھکے اُڑانے میں ناکام رہی اور صرف 219رنز ہی بنا سکی۔۔ حسن علی کی بہترین باﺅلنگ اور تین اہم وکٹوں نے مقابل ٹیم کی میچ پرگرفت کمزور کرنے میں اہم کردار ادا کیا۔

دوسری اننگ میں پاکستانی بلے بازوں نے 119رنز 3وکٹوں کے نقصان پر بنائے اور پھر باقی کی کارکردگی بارش نے دکھائی اور میچ کے اختتامی وقت تک نہ رکی جس کی وجہ سے ڈک ورتھ لوئس قانون کے تحت پاکستان کو ساﺅتھ افریقہ کے خلاف 19رنز سے فاتح قرار دے دیا گیا ۔۔

بہرحال جیت تو جیت ہے۔۔ عوام تو اس بات پر ہی خوش ہے کہ 2009کے بعد چیمپئنز ٹرافی کا پہلا میچ جیت کر پاکستان نے چیمپئنز ٹرافی میں مسلسل ہار نے کا اپنا ہی ریکارڈ توڑ دیا۔۔ کیونکہ 2013میں انگلینڈ میں کھیلی جانے والی چیمپئنز ٹرافی میں پاکستانی ٹیم مسلسل شکست کا شکار ہوئی تھی۔

اس جیت کے بعد ایک بار پھر عوام کی ٹوٹتی اُمیدیں بحال ہوئیں لیکن اگر مگر کا نیا کھیل شروع ہوگیا کیونکہ سری لنکا نے بھارت کو ہرا دیا اور اس طرح ساری ٹیمیں ایک ایک میچ جیت اور ایک ایک ہار چکی ہیں، اتوار کو بھارت اور جنوبی افریقا جب کہ پیر کو سری لنکا اور پاکستان کے درمیان ہونے والے مقابلے ایک طرح سے کوارٹر فائنل ہیں کیونکہ جو جیتے گا وہ سیمی فائنل کے لیے کوالیفائی کرلے گا۔ 

ماہرین کا کہنا ہے کہ اگر سری لنکا کے خلاف میچ کے دوران بارش ہوئی تو اس کا سیدھا نقصان پاکستان کو پہنچے گا کیونکہ رن ریٹ کے اعتبار سے پاکستان سب سے نیچے ہے اس لیے پاکستان کرکٹ ٹیم کو عزت بچانے کے لیے لنکا ڈھانے کی اشد ضرورت ہے اور اس کے ساتھ قوم بھی مصلے پر بیٹھ جائے کہ جنوبی افریقا کے ہاتھوں بھارت کو ہار کا منہ دیکھنا پڑے تاکہ اگر پاکستان آگے نہ پہنچے تو کم از کم بھارت بھی نہ پہنچے، اسی سے ہمارے دل کو سکون ملے گا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نوٹ : یہ بلاگ مہ وش جبیں کا تحریر کردہ ہے ۔ اگر آپ بھی اپنی تحریر آسمانی میں شائع کرانا چاہتے ہیں تو ہمیں news@asmani.pk پر لکھ بھیجیے۔ 


تبصرے

  • اس پوسٹ پر تبصرے نہیں ہیں!