پاکستان نے بھارت سے ایک اور اعزاز چھین لیا

پاکستان میں دنیا کے بلند ترین مقام پر اے ٹی ایم قائم

 دنیا کے بلند ترین اے ٹی ایم کا اعزاز بھارت کے پاس تھا جو 2007 سے 14 ہزار 300 فٹ کی بلندی پر لوگوں کو رقم کی فراہمی یقینی بناتی ہے لیکن اب یہ ازاز پاکستان کے پاس ہے کیونکہ ملک کے سرکاری بینک نیشنل بینک نے پاکستان اور چین کی سرحد پر سطح سمندر سے 15 ہزار 397 فٹ کی بلندی پر اے ٹی ایم کی سہولت فراہم کی ہے۔

 

خنجراب پاس پاکستان کی سرحد پر واقع قراقرم کے پہاڑی سلسلے گلگت بلتستان ہنزہ ضلع ناگر اور چین کی جنوب مغربی سرحد پر سنکیانگ علاقے میں واقع ہے۔ خنجراب کے بعد آنے والا قصبہ سوست ہے۔ جہاں کئی اے ٹی ایم مشین موجود ہیں لیکن اب نینشل بینک آف پاکستان نے درہ خنجراب پاس میں سطح سمندر سے 15397 فٹ کی بلندی پر اے ٹی ایم  لگایا ہے۔

اے ٹی ایم پاکستان چین اکامنک کاریڈور کو ملانے والی مرکزی شاہراہ کے آغاز پر ہی واقع ہے۔ یہ نہایت مقبول سیاحتی مقام ہے۔ اپنے ساتھ سیاحت پر آنے والے بہت زیادہ کیش لانے سے گریزاں رہتے ہیں، سیاحوں کے علاوہ دنیا کا یہ بلند تین اے ٹی ایم مقامی آبادی میں بھی مقبول ہے اور علاقے میں ایک اہم سنگ میل کی حیثیت اختیار کر چکا ہے۔

دنیا کے اس بلند ترین اے ٹی ایم کے ذریعے رقم کی منتقلی اور بلوں کی ادائیگی کی سہولت بھی موجود ہے تاہم اس کے ذریعے رقم جمع کرانے کی سہولت نہیں ہے۔ یہ مشین دن رات سروس مہیا کرتی ہے تاہم سردیوں میں درجہ حرات نقطہ انجماد سے گرنے کے باعث اسے فعال رکھنے کے لئے خصوصی انتظام کئے جاتے ہیں۔ اس کے لئے سوست شہر میں بینک کی ایک شاخ اس کا خیال رکھتی ہے جبکہ بینک کے مرکزی دفتر میں اس مشین کی چوبیس گھنٹے خصوصی مانیٹرنگ کی جاتی ہے۔


نیشنل بینک کے اسٹرٹیجک مارکیٹنگ ڈویژن کے علاقائی سربراہ اویس اسد خان کا اس حوالے سے کہنا ہے کہ م نے اس منصوبے کا آغاز باقاعدہ ہوم ورک کے بعد کیا۔ ہم نے گینز بک آف ورلڈ ریکارڈ سے بھی اس سلسلے میں معلومات لیں۔ بینک کی ماحول دوست پالیسی پر عمل کرتے ہوئے ہم اس اے ٹی ایم کو شمسی توانائی اور ہوا کے ذریعے چلاتے ہیں۔ یہ ہفتے کے تمام دن ہر وقت کھلا رہتا ہے۔

تبصرے

  • اس پوسٹ پر تبصرے نہیں ہیں!