ایسا یہودی فرقہ جو بیت المقدس کو قبلہ نہیں مانتا

تورات کا محافظ قرار دینے والے سامریوں کی تعداد 790 ہے


بہت سے لوگ اس حقیقت سے واقف نہیں ہوں گے کہ یہودیوں کا ایک فرقہ ایسا بھی ہے جس کے پیروکاروں کی تعداد صرف 800 افراد ہے۔

خود کو تورات کا حقیقی محافظ قرار دینے والے سامریوں کی تعداد تقریبا 790 ہے۔ ان میں کچھ لوگ نابلس میں رہتے ہیں جب کہ دیگر افراد 1948 میں قبضے میں لی گئی فلسطینی اراضی میں “حولون” کے علاقے میں رہتے ہیں۔ یہ تورات کے تہواروں کو مناتے ہیں جن کی تعداد سات ہے۔ ان کے نام الفسح، الفطير، الحصاد، عبرانی سال نو ، الغفران، العرش اور فرحت التورات ہیں۔ یہ لوگ اپنے فرقے کے باہر شادی نہیں کرتے اور صرف سامریوں کے ہاتھ کا ذبیحہ کھاتے ہیں۔
سامریہ فرقے کے نزدیک اُن کی تورات صحیح ہے حب کہ دیگر تورات “تحریف شدہ” ہیں۔ سامریہ فرقے کے لوگ فلسطینی معاشرے میں انتہائی قدرتی انداز سے ملے جلے رہتے ہیں، ان کے پاس بیک وقت فلسطینی، اسرائیلی اور اردنی پاسپورٹ ہوتے ہیں.

تبصرے

  • اس پوسٹ پر تبصرے نہیں ہیں!