انسان کی ہڈی سے بنا ساز

’’بون اینکلنگ ‘‘ساز کی قیمت 76 ہزار پاکساتنی روپے تک ہے

دنیا میں مختلف مذاہب پائے جاتے ہیں۔بعض مذہب کے پرستاراپنے عقیدے کوبجالانے میں محیر العقول مظاہرے پیش کرکے اپنی عبادت کا حق پوراکرنے کی کوشش کرتے ہیں۔

مثال کے طور پر تبت میںبدھ مت کے پیروکاروں کی تپسیا اس وقت ہی پوری ہوتی ہے وہ اپنا مذہبی ساز، اینکلنگ بجالیں۔اینکلنگ بجانے کے لیے بہت زیادہ ریاضت کی ضرورت ہوتی ہے۔

حیران کن بات یہ ہے کہ یہ ساز انسان کے کولہے اور ران کی ہڈی سے بنایا جاتا ہے۔ صدیوں سے ایک مذہبی روایت کے طور پر معروف ہونے والے ایک عمدہ ’’بون اینکلنگ ‘‘ساز کی قیمت تبت میں اڑھائی سو سے ساڑھے سات سو ڈالر تک مقرر ہے۔

بدھ مت کے دو مخصوص فرقوں میں انسانی ہڈیوں کا بنا ہوا اینکلنگ ہی استعمال کیا جاتا ہے ۔فی الوقت بھارت،نیپال اور چین اس ضرورت کو ایک منافع بخش کاروبار کے طور پر پورا کررہے ہیں۔یورپ ، چین ، نیپال ،برمااور انڈیا میں مقیم بدھ پیروکار لکڑی سے بنے اینکلنگ کو بھی استعمال کرلیتے ہیں۔ تاہم تبتی بدھ پیروکاروں کا عقیدہ ہے کہ اینکلنگ کسی حادثے میں مرے انسان کی ہڈی سے بنانا چاہیے کیونکہ یوں اس کی روح کا گیان انہیں حاصل ہوتا اور ان کو اپنی تپسیا کے دوران نفس مارنے میں آسانی رہتی ہے

تبصرے

  • اس پوسٹ پر تبصرے نہیں ہیں!