احمد فراز کی شاعری

  • فراز اب کوئی سودا کوئی جنوں بھی نہیں

  • شگفت گل کی صدا میں رنگ چمن میں آؤ

  • یہ کیا سب سے بیاں دل کی حالتیں کرنی

  • یوں تو کہنے کو بہت لوگ شناسا میرے

  • وفاق کے خواب محبت کا آسرا لے جا

  • تیری باتیں ہی سنانے آئے

  • سکوت بن کے جو نغمے دلوں میں پلتے ہیں

  • رنجش ہی سہی دل ہی دکھانے کے لئے آ

  • کچھ نہ کسی سے بولیں گے

  • کیا ایسے کم سخن سے کوئی گفتگو کرے

  • خاموش ہو کیوں داد جفا کیوں نہیں دیتے

  • سلسلے توڑ گیا وہ سبھی جاتے جاتے