پروین شاکر کی شاعری

  • مجھے تم یاد آتے ہو۔۔۔۔

  • وہ رت بھی آئی کہ میں پھول کی سہیلی ہوئی

  • یوں حوصلہ دل نے ہارا کب تھا

  • تم لوگ اکیلے، راہبر ہی نہ تھا

  • تجھ سے کوئی کوئی گلہ نہیں ہے

  • رستہ بھی کٹھن دھوپ میں شدت بھی بہت تھی

  • رقص میں رات ہے بدن کی طرح

  • رقص میں رات ہے بدن کی طرح

  • کیا کیا دکھ دل نے پائے

  • کمال ضبط کو خود بھی تو آزماؤں گی

  • موجیں بہم ہوئیں تو کنارہ نہیں رہا

  • تم مجھ کو گڑیا کہتے ہو