افتخار نسیم کی شاعری

  • روزوشب کا یہ سلسلہ ہے کیا

  • اُسی کا نام لیا جو غزل کہی میں نے

  • نہ جانے کب وہ پلٹ آئیں در کھلا رکھنا

  • نہ جانے کب وہ پلٹ آئیں در کھلا رکھنا

  • نہ جانے کب وہ پلٹ آئیں در کھلا رکھنا

  • اپنی مجبوری بتاتا رہا رو کر مجھ کو

  • مشعل امید تھا مو رہ نما جیسا بھی ہے