راحت اندوری کی شاعری

  • سمندر پار ہوتی جا رہی ہے

  • گھر سے یہ سوچ کہ نکلا ہوں کہ مر جانا ہے

  • بیمار کو مرض کی دوا دینی چاہیئے

  • سب کو رسوا باری باری کیا کرو