اکبر الہ آبادی کی شاعری

  • ہنگامہ ہے کیوں برپا ۔۔۔۔۔۔ اکبرالٰہ آبادی

  • جب یاس ہوئی تو آہوں نے سینے سے نکلنا چھوڑ دیا

  • دل مرا جس سے بہلتا کوئی ایسا نہ ملا

  • نازاں ہیں جوش حسن پہ گل ہائے دل فریب

  • یہ سست ہے تو ہھر کیا وہ تیز ہے تو پھر کیا

  • جہاں میں حال مرا اس قدر زبون ہوا

  • پھر گئی آپ کی دودن میں طبیعت کیسی

  • جب یاس ہوئی تو آہوں نے سینے سے نکلنا چھوڑ دیا

  • مل گیا شرع سے شراب کا رنگ

  • دل مایوس میں وہ شورشیں برپا نہیں ہوتیں

  • درد تو موجود ہے دل میں دوا ہو یا نہ ہو

  • دل مایوس میں وہ شورشیں برپا نہیں ہوتیں