حفیظ جالندھری کی شاعری

  • ابھی تو میں جوان ہوں: حفیظ جالندھری

  • ہم ہی میں تھی نہ کوئی بات، یاد نہ تم کو آسکے

  • اٹھو اب دیر ہوتی ہے وہاں چل کر سنور جانا

  • اک بار پھر وطن میں گیا جاکے آگیا

  • او دل توڑ کے جانے والے دل کی بات بتاتا جا

  • اُٹھ اُٹھ کے بیٹھ بیٹھ گئے پھر رواں رہے

  • کمبخت دل برا ہوا تری آہ آہ کا

  • تیر چلے پہ نہ آنا کہ خطا ہوجانا

  • اُٹھ اُٹھ کے بیٹھ بیٹھ گئے پھر رواں رہے

  • اُٹھ اُٹھ کے بیٹھ بیٹھ گئے پھر رواں رہے

  • زندگی کا لطف بھی آجائے گا

  • زندگی کا لطف بھی آجائے گا