بشیر بدر کی شاعری

  • یہ زردپتوں کی بارش مرا زوال نہیں

  • یوں ہی بے سبب نہ پھرا کرو کوئی شام گھر میں رہا کرو

  • تتلیوں کا مجھے ٹوٹا ہوا پر لگتا ہے

  • اچھا تمہارے شہر کا دستور ہوگیا

  • پرکھنا مت پرکھنے میں کوئی اپنا نہیں رہتا

  • اگر تلاش کروں کوئی مل ہی جائے گا

  • تھا میر جن کو شعر کا آزار مر گئے

  • سر جھکاؤ گے تو پتھر دیوتا ہوجائے گا

  • تھا میر جن کو شعر کا آزار مر گئے

  • سر جکھاؤ گے تو پتھر دیوتا ہوجائے گا

  • یوں ہی بے سبب نہ پھرا کرو کوئی شام گھر میں رہا کرو

  • سر جھکاؤ گے تو پتھر دیوتا ہوجائے گا